کاروبار

فکر وخیالات

زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

لڑکیوں کی کم عمر میں شادی سے متعلق سعودی عرب کا بہت بڑا فیصلہ

Administrators

ریاض،24دسمبر(ایجنسیاں)۔

شہزادہ محمدبن سلمان جب سے سعودی عرب کے ولی عہد بنائے گئے ہیںسعودی عرب کو سماجی اور معاشی اعتبار سے تبدیل کرنے کیلئے مسلسل بڑے بڑے اور اہم فیصلے لے رہے جس کی وجہ سے سعودی عرب ہی نہیں بلکہ دوسرے ممالک میں بھی ان کی مقبولیت میں زبردست اضافہ ہوتا جارہا ہے۔سعودی حکومت نے ایک اور نہایت ہی اہم فیصلہ کرکے نہ صرف سعودی عرب بلکہ دنیا کو بھی چونکا دیا ہے۔

سعودی عرب کی وزارت انصاف نے مملکت میں شادی کی کم سے کم عمر 18 سال مقرر کردی ہے اور اس کی خلاف ورزی کرنے والے نکاح خواں کے خلاف قانونی کارروائی کا حکم دیا گیا ہے۔میڈیارپورٹ کے مطابق وزارت انصاف کی طرف سے ملک بھر کی فیملی عدالتوں اور نکاح خواں حضرات کو ایک سرکلر جاری کیا گیا ہے جس میں ان سے کہا گیا ہے کہ وہ شادی بیان سے متعلق آئین کے آرٹیکل 163 پرعمل درآمد یقینی بنائیں ورنہ اس کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ شادی کی کم سے کم عمر مقررکرنا بچوں کے تحفظ کے نظام کا حصہ ہے۔ نکاح خواں کو نکاح سے قبل اس امرکو یقینی بنانا ہوگا کہ لڑکے اور لڑکی دونوں میں سے کسی کی عمر 18 سال سے کم نہ ہو۔ بصورت دیگر نکاح رجسٹرڈ نہیں ہوگا۔

You May Also Like

Notify me when new comments are added.