کاروبار

فکر وخیالات

زیادہ پڑھی جانے والی خبریں

نفرت انگیز تقریر کرنے پرمودی کے وزیرانوراگ ٹھاکراورممبرپارلیمنٹ پر الیکشن کمیشن کی سخت کارروائی،تشہیر کرنے پرلگائی پابندی

Administrators

ہماری دنیا بیورو

نئی دہلی،30جنوری۔ الیکشن کمیشن نے وزیرمملکت برائے خزانہ انوراگ ٹھاکر پر 72 گھنٹے اور بی جے پی ممبرپارلیمنٹ پرویش ورما پر 96 گھنٹے کے لئے تشہیر کرنے پر پابندی عائد کردی ہے۔ دہلی اسمبلی انتخابات میں تشہیری مہم کے دوران مبینہ طور پر متنازعہ بیان دینے کے معاملے میں الیکشن کمیشن نے بدھ کو مرکزی وزیر انوراگ ٹھاکر اور بی جے پی کے ممبرپارلیمنٹ پرویش صاحب سنگھ ورما کا نام بی جے پی کے تشہیری مہم کمیٹی کی فہرست سے ہٹانے کا حکم دیا تھا۔ ساتھ ہی کمیشن نے ورما کو انتخابی مہم کے دوران متنازعہ بیان دینے پروجہ بتاو نوٹس جاری کرکے جمعرات تک جواب دینے کو کہا تھا۔الیکشن کمیشن متنازعہ بیان معاملہ میں ٹھاکر سے منگل کو ہی جواب طلب کر چکا ہے۔

بتا دیں کمیشن کی طرف سے جاری بیان میں ٹھاکر اور ورما کا نام بی جے پی کے اسٹارپرچارکوں کی فہرست سے فوری اثر سے ہٹانے کو کہا گیا ہے۔ الیکشن قوانین کے مطابق کسی پارٹی کے اسٹارپرچارکوں کی فہرست میں شامل رہنماو¿ں کے تشہیر کا خرچ پارٹی کے انتخابی مہم کے اخراجات میں شامل ہے، جبکہ اسٹارپرچارکوں کی فہرست سے الگ رہنماو¿ں کی تشہیر کرنے پر ہونے والے اخراجات کو امیدوار کے انتخابی خرچ میں شامل کیا جاتا ہے، الیکشن قوانین کے تحت سیاسی پارٹی کے لیے اپنے امیدواروں کی تشہیر پر خرچ کی کوئی حد مقرر نہیں ہے۔ وہیں دہلی میں اسمبلی انتخابات کے امیدواروں کی تشہیر پر خرچ کی حد 28 لاکھ روپے ہے۔واضح ہے کہ ٹھاکر یا ورما کو بی جے پی کے اسٹار پرچارکوں کی فہرست سے باہر کئے جانے کے بعد بھی اگر وہ انتخابی مہم میں شامل ہوتے ہیں تو اس میں خرچ ہونے والی رقم، امیدوار کے انتخابات خرچ میں شامل کی جائے گی۔ کمیشن کے انڈر سیکریٹری پون دیوان کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ دہلی اسمبلی انتخابات میں ٹھاکر اور ورما کے متنازعہ بیانات سے ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی ہونے سے متعلق دہلی کے چیف الیکشن آفیسر (سی ای او) کی رپورٹ کی بنیاد پر یہ کارروائی کی گئی ہے۔

غور طلب ہے کہ ٹھاکر پر رٹھالا اسمبلی حلقہ میں پیر کو ایک عوامی جلسے میں بھیڑ سے متنازعہ نعرے لگوانے کا الزام ہے جبکہ مغربی دہلی کے ایم پی ورما پر شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے ) کی مخالفت کرنے والوں کے بارے میں متنازعہ تبصرہ کرنے کا الزام ہے۔ اس دوران کمیشن نے متنازعہ بیان کے معاملے میں مغربی دہلی سے بی جے پی کے ایم پی پرویش ورما کو وجہ بتاو نوٹس جاری کرکے ان سے جمعرات تک کمیشن میں اپنا موقف رکھنے کو کہا ہے۔ کمیشن نے ٹھاکر سے منگل کو ہی وجہ بتاو نوٹس جاری کر چکا ہے۔

You May Also Like

Notify me when new comments are added.